گرمیو ں میں حسن کو نکھا ریں

آب و ہو ا انسانی جلد پر اثر انداز ہو تے ہیں۔ اس لیے ضروری ہے کہ مو سم کی تبدیلی کے ساتھ ہی اپنی جلد پر توجہ دینی شروع کر دی جائے تا کہ مو سم کی وجہ سے ہو نے والے جلدی مسائل سے بچا جاسکے۔سردیوں میں ہماری جلد کسی اور طرح سے ہو تی ہے جبکہ گرمیوں میں جلد کی ساخت اور حساسیت مکمل طور پر بد ل جاتی ہے۔سردیوں اور گرمیوں میں جلد کے لیے ٹو ٹکے بھی الگ ہو تے ہیں یہ ضروری نہیں کہ اگر سردیوں میں جو ٹو ٹکے آپ کی جلد کے لیے مفید ہیں وہ گرمیوں میں بھی آپ کی جلد پر اچھا اثر ڈالیں۔ اس لیے کو ئی بھی ٹو ٹکہ استعمال کر نے سے پہلے اس بات کا خیال ضرور رکھیں کہ وہ آپ کی جلد پر کو ئی مضر اثر نہ ڈالے۔
نمی، سورج کی روشنی اور گرمی آپ کی قیمتی جلد کو تبا ہ کر دیتی ہے اگر اس پر تو جہ نہ دی جائے تو آپ کی نازک جلد کو گرمیا ں خا صا نقصان پہنچاتی ہیں اس لیے اپنی جلد کی حفا ظت اور صحت کے لیے درج ذیل باتوں کو مد نظر رکھیں تا کہ گرمیوں سے لطف اندوز ہو ا جاسکے۔
اگر آپ کی جلد صاف ہے تو سورج کی شعا عیں اس کو نقصان پہنچاتی ہیں۔ اس لیے دھو پ میں نکلنے سے پہلے اپنے چہرے کو اور ان حصوں کو ڈھانپ کر با ہر نکلیں جن پر سورج کی شعاعیں پڑ سکتی ہیں۔ اس کے لیے ضروری ہے کہ سن اسکرین لوشن کا استعمال کیے بنا گھر سے نہ نکلیں۔
گرمیوں کے مو سم میں کیل مہاسے ایک بڑا مسئلہ ہیں۔کیل مہاسے آپ کی جلد کو خر اب کر کے اس میں ریش پیدا کر تے ہیں۔ اس لیے کو شش کر یں کہ گرمیوں میں جہاں تک ممکن ہو سکے ان اشیاء کا استعمال کر یں جو گرمی کے خاتمے کا سبب ہو ں۔
سرکہ گرمیوں میں بہترین دوا ہے اسے آپ جلی ہو ئی جلد کے لیے استعما ل کر سکتے ہیں۔
دن میں کم از کم آٹھ سے بارہ گلاس پانی پئیں۔
گرمیوں میں گہر ے آنکھوں میں گہر ے رنگ کے شیڈ لگانے سے احتر از کر یں۔سورج کی شعاعیں ان گہرے شیڈز کو نقصان پہنچاتی ہیں۔ اس لیے ضروری ہے کہ بنا میک اپ کے گھر سے نکلیں۔ اگر ضروری ہو تو بر اؤن شیڈ لگائیں۔
اپنی جلد کو بلا ناغہ موئسچر ائز کر یں۔
اگر آپ کی جلد چکنی ہے تو صابن کے بجائے اپنا چہر ہ بیسن سے دھو ئیں اس سے نہ صر ف کیل مہاسے ختم ہو نگے، چکناہٹ ختم ہو گی اور جلد بھی نکھرے گی۔
پانی والے پھل کا استعمال زیادہ کر یں۔ جیسے کھیر ا، تربوزوغیر ہ تا کہ آپ کی جلد خر اب ہو نے سے محفو ظ رہ سکے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں