جامن کے متعدد فو ائد

یہ جامنی رنگ کا پھل ہو تا ہے۔ اس کی آ مد برسات کے مہینوں میں ہو تی ہے۔ یہ سخت ہو تا ہے جسے نمک ڈال کر اور رگڑ کر نرم کیا جاتا ہے۔ یہ ایک سو فٹ تک اونچا ہو تا ہے اور تیزی سے بڑھتا ہے۔ اس کی لکڑی خاصی سخت ہو تی ہے اور لکڑی کا کام کر نے کے کام آتی ہے۔ اپنی نو عیت کا یہ چھو ٹاسا پھل اپنے اندر بے شمار فو ائد رکھتا ہے۔ اس سے بہترین شہد حا صل ہو تا ہے۔ اس پھل کے بیجو ں سے سفوف تیار کیا جا تا ہے۔ اس کے پھل سے جامن، اسکو ائش،جو س اور جیلی تیار کی جاتی ہے۔یہ کھٹا میٹھا منہ میں خشکی پیدا کر نے والا پھل ہے۔
اس میں وٹامن اے، بی، سی میلک ایسڈ، آگزیلک ایسڈاور ٹینن کیلشیم اور پروٹین پایا جاتا ہے۔
اس کا سرکہ پیٹ درد، بد ہضمی، بھو ک کی کمی کو دور کر تا ہے۔
یہ قبض پیدا کر تاہے۔
پر انے اسہال کے لیے مفید ہے۔
یہ پیشاب آور پھل ہے۔
خو ن صاف کر تا ہے۔
خو نی بو اسیر میں اس کو روزانہ نمک کے ساتھ دو ما ہ کھائیں۔
اگر مسو ڑھے کمزور اور پھو لے ہو ئے ہو ں، ان سے خو ن نکلتا ہو اور دانت ہلتے ہو ں تو جامن کے چھال کے جو شاندے کی کلیاں کر نے سے مضبو ط ہو جاتے ہیں۔
جامن کا شر بت اور سرکہ معدہ، جگر اور تلی کے امر اض میں مفید ہے۔ اسکا سرکہ بڑھی ہو ئی تلی کو گھلاتا ہے۔
شو گر کے مریضوں کے لیے خاص پھل ہے۔
امر اض قلب میں بہترین ہے۔
چہرے کی شادابی، داغ دھبے اور جھائیو ں کو دور کر نے کے لیے جامن کابیرونی استعمال کیا جاتا ہے۔
اس کی چھال کا جو شاندہ منہ کا السر، مسوڑھوں کی بیماریوں اور منہ کے چھالوں کے لیے بطور ماؤتھ واش استعمال کیا جا تا ہے۔
اس کی چھال صبح شام رگڑ کر پلاناحیض کی زیادتی کو کم کر تی ہے۔
اس کی چھال سائے میں خشک کر کے کپڑے سے چھان کر چار ما شہ صبح شام پانی کے ساتھ استعمال کر نے سے لیکو ریا کا مر ض ٹھیک ہو تا ہے۔
گرتے حمل میں اس کی چھال کا جو شاند ہ مفید ہے۔
پیاس کی شدت کو کم کر تا ہے۔
احتلام میں اس کا استعمال فائدہ مند ہے۔
اس کے پتوں کو پرفیوم بنانے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔
لو لگنے کی صورت میں جامن کھانے سے لو کے اثر ات دور ہو تے ہیں۔
اس کا استعمال خو ن کا گا ڑھا پن اور تیز ابیت دور کر تا ہے۔
پھو ڑے پھنسیوں میں اس کا استعمال مفید ہے۔
اس میں پایا جانے والا فو لاد خون کی کمی کو دور کر تا ہے۔
بھو ک کی کمی کو دور کر نے کے لیے نمک، سیاہ زیر ہ اور شکر ملا کر کھانامفید ہے۔
معدے کے زخم اور آنکھوں کے ورم میں مفید ہے۔
گرتے بالوں کے لیے انمو ل ہے۔
منہ کی بد بو کو دور کر تا ہے۔
جلنے سے جلد پر نشان پڑ جاتے ہیں۔ اس پر جامن کے پتوں کا رس لگانے سے ختم ہوجاتے ہیں۔
زیادہ جامن کھانا کھانسی اور پھیپھڑوں میں بلغم پیدا کر تا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں