بچو ں کا دانت پیسنا اور علا ج

اکثر بچوں میں رات سو تے وقت دانتوں کو رگڑنے کی عا دت ہو تی ہے ۔حقیقت میں یہ علامت ہے مر ض نہیں۔ یہ کیلشیم کی کمی کی وجہ سے ہو تا ہے۔اس کے علاوہ اس کی وجہ جڑو ں کا تشنج ہو نا بھی ہے جس کی وجہ سے دما غی رطو بت کا بکثر ت گر نا یا ان میں گندگی پید ا ہو نا اس کا باعث بنتا ہے۔
عمو ماً ما ئیں بچے کی اس عا دت سے پریشان بھی نظر آتی ہیں اور بچوں کو دانت پیستے دیکھ کر الجھن کا شکا ر ہو تی ہیں۔ عموماً یہ بیمار ی چھوٹے بچو ں میں پائی جاتی ہے جو وقت کے سا تھ سا تھ ختم ہو جاتی ہے اگر اس بیمار ی کا سبب معلو م ہو تو اس کو دور کر نا آسا ن ہو تا ہے ۔
ذہنی الجھن
عمو ماً لو گ سو چتے ہیں کہ بھلا بچو ں میں ایسی کو نسی الجھن ہو تی ہے جو ان میں اس عا دت کا با عث بنتی ہے۔ما ہرین کا کہنا ہے کہ جو بچے سکو ل یا گھر میں طنز و تحقیر کا نشانہ بنتے ہیں وہ نیند میں دانت پیستے ہیں۔ ایسے بچے ڈپر یشن کا شکا ر رہتے ہیں ۔
تناؤ یا پر یشا نی
بچوں کو اگر کو ئی پر یشا نی ہو تو وہ دانت پیستے ہیں۔ اس وقت کچھ بچے ایسے بھی ہو تے ہیں جن کو سو تے میں دانت رگڑنے کے علا وہ جاگنے میں بھی دانت رگڑنے کی بیماری ہو تی ہے۔ اگر چہ یہ کو ئی اتنی بڑی بیماری نہیں لیکن اس کے باوجود یہ بے چینی کاسبب بننے والامرض ہے۔ جس طرح کچھ لو گ پر یشانی میں ہو نٹ کا ٹنے یا انگلیا ں چٹخا نے کے عا دی ہو تے ہیں اسی طر ح کچھ بچے پر یشانی اور تناؤ کی حالت میں دانت رگڑنے کے عا دی ہو تے ہیں۔ اس لیے جب آپ اپنے بچوں کو دانت رگڑتے دیکھیں تو ان سے خفا ہو نے یا ڈانٹنے کے بجائے اسعا دت کی وجہ جان کر اسے حل کر نے کی کو شش کریں تو دانت پیسنے کی عا دت ختم ہو جائے گی۔
پیٹ میں کیڑے ہو نا
کچھ بچو ں کے پیٹ میں کیڑے ہو نے کی وجہ سے بھی وہ دانت پیستے ہیں۔
علا ج
انا ر کا سو کھے ہوئے چھلکے کاپاؤڈر بنا لیں اور ایک چٹکی روزانہ پانی میں حل کر کے پلا دیں۔ اس سے بچے رات کو دانت پیسنا بند کر دیں گے۔
سو نف کو باریک پیس کر اس میں شہد ملا لیں اور اسے سو نف کے عر ق کے ساتھ بچو ں کو کھلا دیں ۔ اس سے دانت رگڑنے کے مر ض میں افا قہ ہو گا۔
سو نے سے آدھا گھنٹہ پہلے آدھا چمچ پسی ہو ئی کا لی مر چ دانتوں پر گڑیں ۔ لگا تا ر تین ہفتے کر نے سے اس مر ض سے نجا ت مل جا ئے گی۔
رو ن سو س کے ساتھ گر دن کی ما لش کر نے سے اس مر ض میں افا قہ ہو گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں